خوش اور کامیاب زندگی گزارنے کے اصول

0
29

 اپنی زندگی کی خود ذمہ داری لیں

. آپ یہ جان لیں کے آپ اپنی خوشی اور غم دونوں کے خود زمہ دار ہیں یہ بہت ہی مشکل لیکن آسان فلسفہ ہے اور خدارا اپنی اولاد کو بھی اپنی زات کی زمیداری لینا سکھائیں

اچھے لوگوں کی صحبت میں رہیں 

دوست مل جائے تو کمال ہے لیکن دوست سے زیادہ اہمیت اس بات کی ہے کہ آپ اچھے لوگوں کے ساتھ رہیں آپ اچھے لوگوں کے  ساتھ وقت گزاریں اپنے لیے مینٹور ضرور بنائیں یا ان کی تلاش میں رہیں . وہ لوگ جن سے آپ سیکھ سکیں – ایسے لوگ جو آپ کو موٹیویٹ کریں یا آپ کو زندگی گزارنا سکھائیں ان کے ساتھ رہیں مشورہ ضرور کریں تاکہ مختلف رائے سامنے آئے لیکن اپنی صورتحال پر فیصلہ لینا سیکھیں دوست وہ ہے جو آپ کی خوشی میں اور غم آپ کے ساتھ ہو اور آپ کو مخلص مشورہ دے سکے

زندگی کا مقصد بنائیں

اپنی زندگی کا مقصد بنائیں یہ مقصد آپ کو جینا سکھائے گی .اپنی مقصد کو باقاعدہ چھوٹے چھوٹےگولز میں پلان کریں اور انکو حاصل کریں اپنا مقصد بہرحال حق پر قائم کریں یہ مقصد خود کفیل ہو نا بھی ہو سکتا ہے اپنے حالات کو بہتر کرنا معاشرہ میں کوئی اہم کردار ادا کرنا اپنے آپ کو بہتر کرنا وغیرہ لیکن یاد رکھیں کہ آپ مقصد سے ایماندار رہیں تنخواہ , مراعت یا سیاست سے بے تعلق ہو کر

 باہر کے شور کو اپنے اندر مت آنے دیں

شور سے مراد ہے دوسروں کا طعنہ دینا – الزام لگانا, آپ کو طنز کرنا. سیاست بازی وغیرہ چاہے کرنے والے آپ کے قریب ترین رشتے دار جیسے والدین ہی کیوں نہ ہوں اگر آپ کا مقصد اور نیت نیک ہے تو بس اسکو جاری رکھیں جب آپ غیر ضروری چیزوں سے خود کو بچائیں گے تو نہ صرف اپکی انرجی مخفوظ ہو گی آپ بہتر چیزوں پر اچھے سے توجہ بھی دے پائیں گے سنیں مسکرائیں اگنور کریں اور آگے بڑھتے جائیں

کو ڈفائن کریں values اور boundaries اپنی

یہ آج کے دور کی سب سے بڑی ضرورت ہے. انسان کو جہاں اپنی کردارسازی کے لیے ویلیوز بنانی چاہیے وہیں اپنے لیے باونڈریز بھی ڈفائن کرنی چاہیے ویلوز وہ اقدار ہیں جو آپ اپنے میں , اپنے گھر میں دیکھنا چاہتے ہیں لیکن باونڈریز سے مراد مختلف لوگوں کو اپنے سے تعلق رکھنے کے لیے آپ کس حد تک اجازت دیتے ہیں یا کون سے اصول کس رشتہ کے لوگوں کو آپ سے تعلق کے سبب دیکھنے ہوں گے

اپنے آج کو قبول کریں اور اسکو بہتر بنائیں

 ہمیشہ اپنے آج کو بہتر کرنے پر غور کریں اور اپنے آج کو بھرپور گزاریں . مسقبل کی منصوبہ بندی ضروری ہے لیکن آج سے مراد ماضی کو اہمیت نہ دینا ہے اس سے سیکھنا کافی ہے یاد رہے جب تک انسان زندہ ہے وہ اپنے آج میں معافی مانگ کر پہلے سے بہتر بن سکتا ہے اور اپنے انجام اور کل کو بہتر بنا سکتا ہے .غلطی, گناہ, کوتاہییاں وغیرہ سب گزر گیا تو اب بہتری ہو سکتی ہے اسی طرح اگرگزرا وقت اچھا تھا اب آپ تکلیف میں ہیں تو آپ کے اندر خوبی ہے کہ آپ اپنے آج کو بہتر کر سکیں بجائے ماضی میں جینے کے. بہت سے لوگ کچھ سالوں کی تکلیفوں کو اتنا سوار کر لیتے ہیں کہ اپنا کل بھی خراب کر لیتے ہیں

 آپ اپنے اردگرد جنت بنا لیں آپ جنت پاائیں گے. مطلب یہ کہ اپنے اندر باہر کو خیر بنا لیں اور خیر بانٹتے جائیں بس آپ جنت بنا لیں گے

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here